عن أبي بَرْزَةَ نَضْلَةَ بن عبيد الأسلمي -رضي الله عنه- مرفوعاً: «لا تَزُولُ قَدَمَا عَبْدٍ يَومَ القِيَامَةِ حَتَّى يُسْأَلَ عَنْ عُمُرِهِ فِيمَ أَفْنَاهُ؟ وَعَنْ عِلْمِهِ فِيمَ فَعَلَ فِيهِ؟ وَعَنْ مَالِهِ مِنْ أَيْنَ اكْتَسَبَهُ؟ وفِيمَ أَنْفَقَهُ؟ وَعَنْ جِسْمِهِ فِيمَ أَبْلَاهُ؟».
[صحيح.] - [رواه الترمذي والدارمي.]
المزيــد ...

ابو بَرزَہ نضلہ بن عبید اسلمی رضی اللہ عنہ سے مرفوعاً روایت ہے: ’’قیامت کے دن کسی شخص کے قدم اس وقت تک اپنی جگہ سے نہ ہٹیں گے جب تک کہ اس سے پوچھ نہ لیا جائے: اس کی عمر کے بارے میں كہ اس نے اسے کن چیزوں میں ختم کیا؟ اس کے علم کے بارے میں کہ اس نے اسے کن چیزوں میں خرچ کیا؟ اس کے مال کے بارے میں کہ اس نے اسے کہاں سے کمایا اور کہاں خرچ کیا؟ اور اس کے جسم کے بارے میں کہ اسے کن چیزوں میں کھپایا؟‘‘

شرح

بندے کے قدم میدان حشر سے اس وقت تک نہیں ہٹیں گے اور وہ اس وقت تک وہاں سے جنت یا دوزخ کی طرف روانہ نہیں ہو گا جب تک کہ اس سے یہ نہ پوچھ لیا جائے کہ اس نے اپنی زندگی فرماں برداری میں بسر کی یا پھر گناہوں میں؟ اس نے اپنے علم پر کس قدر عمل کیا؟ کیا اس نے اپنے علم کے موافق عمل کیا یا نہیں؟ اس کا مال کہا سے آیا تھا؟ کیا وہ حلال ذرائع سے حاصل کیا گیا تھا یا حرام ذرائع سے؟ اور یہ کہ اسے کن مصارف میں خرچ کیا؟ آیا اسے اللہ کی اطاعت میں صرف کیا یا پھر اس کی معصیت میں؟ اپنے جسم کو کن کاموں میں کھپایا؟ اللہ کی اطاعت میں یا اس کی نافرمانی میں۔

ترجمہ: انگریزی زبان فرانسیسی زبان ہسپانوی زبان ترکی زبان انڈونیشیائی زبان بوسنیائی زبان روسی زبان بنگالی زبان چینی زبان فارسی زبان
ترجمہ دیکھیں