عن عبد الله بن مسعود -رضي الله عنه- قال: سألت رسول الله -صلى الله عليه وسلم- أيُّ الذنب أعظم؟ قال: «أن تجعل لله نِدًّا، وهو خَلَقَكَ» قلت: ثم أَيُّ؟ قال: «ثم أن تقتل ولدك خَشْيَةَ أن يأكل معك» قلت: ثم أَيُّ؟ قال: «ثم أن تُزَانِي حَلِيْلَةَ جَارِكَ».
[صحيح.] - [متفق عليه.]
المزيــد ...

عبد اللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے میں نے رسول اللہ ﷺ سے دریافت کیا کہ کون سا گناہ سب سے بڑا ہے؟ آپ ﷺ نے فرمایا: ’’سب سے بڑا گناہ یہ ہے کہ تو اللہ کا شریک بنائے حالانکہ اس نے تمہیں پیدا کیا ہے‘‘۔ میں نے پوچھا کہ اس کے بعد کون سا گناہ سب سے بڑا ہے؟ آپ ﷺ نے فرمایا: (اس کے بعد سب سے بڑا گناہ یہ ہے کہ) تو اپنے بچے کو اس ڈر سے مار دے کہ وہ تیرے ساتھ کھانے میں شریک ہو گا‘‘۔ میں نے پوچھا کہ اس کے بعد کون سا گناہ سب سے بڑا ہے؟ آپ ﷺ نے فرمایا کہ (اس کے بعد سب سے بڑا گناہ یہ ہے کہ) تو اپنے پڑوسی کی بیوی سے زنا کرے‘‘۔

شرح

صحابہ رضی اللہ عنہم نے بڑے گناہوں سے متعلق دریافت کیا تو آپﷺ نے انہیں سب سے بڑے گناہ کے بارے میں بتایا کہ وہ شرک اکبر ہے جسے اللہ تعالیٰ صرف توبہ ہی سے بخشتا ہے۔ اگر شرک اکبر کا مرتکب (بغیر توبہ کے) مر گیا تو وہ ہمیشہ ہمیشہ جہنم میں رہے گا۔اس کے بعد جو گناہ آتا ہے وہ یہ ہے کہ آدمی اپنے بچے کو اس خوف سے مار دے کہ وہ اس کے ساتھ اس کے کھانے میں شریک ہو گا۔چنانچہ کسی ایسی جان کو مار دینا جسے اللہ نے حرام کیا ہو، اس کا مرتبہ بڑے گناہوں میں دوسرا ہے۔ اور گناہ اور اس کی سزا اور بھی زیادہ ہو جاتی ہے جب کہ مقتول، قاتل کا رحمی رشتہ دار ہو اور یہ اور بھی زیادہ ہو جاتی ہے جب کہ قتل کا مقصد مقتول کو اللہ کے اس رزق سے محروم کرنا ہو جسے اللہ نے قاتل کے ہاتھ پر جاری فرمایا ہے۔ پھر یہ کہ آدمی اپنے ہمسائے کی بیوی سے زنا کرے۔ کبیرہ گناہوں میں تیسرا درجہ زنا کا ہے۔ اس کا گناہ اور بھی زیادہ ہو جاتا ہے جب کہ جس عورت سے زنا کیا جائے وہ ہمسائے کی بیوی ہو جس کے ساتھ شریعت نے حسن سلوک، نیکی اور اچھی صحبت کی نصیحت کی ہے۔

ترجمہ: انگریزی زبان فرانسیسی زبان ہسپانوی زبان ترکی زبان انڈونیشیائی زبان بوسنیائی زبان روسی زبان بنگالی زبان چینی زبان
ترجمہ دیکھیں