عن حُذَيْفَةَ بْنِ الْيَمَانِ -رضي الله عنهما- مرفوعاً: «لا تلْبَسُوا الحرير ولا الديباج، ولا تشربوا في آنية الذهب والفضة ولا تأكلوا في صِحَافِهِمَا؛ فإنَّهَا لهم في الدنيا ولكم في الآخرة».
[صحيح.] - [متفق عليه.]
المزيــد ...

حذیفہ بن یمان رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: "ریشم و دیباج نہ پہنو اور نہ سونے اور چاندی کے برتن میں کچھ پیؤ اور نہ ہی ان سے بنی پلیٹوں میں کچھ کھاؤ۔ یہ دنیا میں ان (کفار) کے لیے اور آخرت میں تمہارے لیے ہیں"۔

شرح

نبی ﷺ نے مردوں کو ریشم اور دیباج پہننے سے منع فرمایا کیوں کہ مرد کے اسے پہننے میں نزاکت اور زنخے پن کا اظہار ہوتا ہے اور نازک مزاج و عیش پرست عورتوں سے مشابہت ہوتی ہے۔ جب کہ مرد میں خشونت، قوت اور مردانگی کی صفات ہونی چاہئیں۔ اسی طرح نبی ﷺ نے مرد و عورت دونوں کو سونے اور چاندی کی پلیٹوں اور برتنوں میں کھانے پینے سے منع فرمایا۔ اس ممانعت کی حکمت آپ ﷺ نے خود بیان کی کہ دنیا میں ان برتنوں میں کھانا کفار کے لیے ہے جو دنیاوی زندگی میں ہی اپنی من پسند اشیاء سے لطف اندوز ہو لیتے ہیں اور اگر تم اللہ کے خوف اور اس کے پاس جو نعمتیں ہیں ان کی چاہت میں ان کے استعمال سے پرہیز کرو گے تو روزِ قیامت یہ صرف اور صرف تمہارے لیے یعنی مسلمانوں کے لیے ہوں گی۔ چنانچہ کفار کی مشابہت سے بچنے اور اللہ کے حکم کی تعمیل میں ان کا استعمال حرام ہے۔ اسی طرح جو مرد دنیا میں ریشم پہنتا ہے وہ پہلے ہی لطف اندوز ہو لیتا ہے اس لیے آخرت میں وہ اسے بالکل بھی نہیں پہن سکے گا۔جو شخص وقت سے پہلے حرام طریقے سے کوئی چیز حاصل کر لے اس کی سزا یہ ہے کہ اسے اس چیز سے محروم کر دیا جائے۔ اور اللہ بہت سخت سزا دینے والا ہے۔

ترجمہ: انگریزی زبان فرانسیسی زبان ہسپانوی زبان ترکی زبان انڈونیشیائی زبان بوسنیائی زبان روسی زبان بنگالی زبان چینی زبان فارسی زبان
ترجمہ دیکھیں