عن ابن عمر -رضي الله عنهما- قال: لم يكنْ رسول الله -صلى الله عليه وسلم- يَدَعُ هؤلاء الكلماتِ حين يُمْسي وحين يُصْبحُ: «اللَّهُمَّ إنِّي أسْأَلُكَ العافيَةَ في ديني ودُنْيَايَ وأَهْلي ومَالي، اللَّهُمَّ اسْتُر عَوْراتي وآمِنْ رَوْعاتي، واحفَظْني مِنْ بين يديَّ ومِن خَلْفِي وعن يميني وعن شِمَالي ومِنْ فَوْقِي، وأَعُوذُ بِعَظمَتِك أَنْ أُغْتَالَ مِنْ تَحتي».
[صحيح.] - [رواه أبو داود والنسائي في الكبرى وابن ماجه وأحمد والحاكم. ملحوظة: لفظ الحديث في مصادر التخريج: اللهم إني أسألك العافية في الدنيا والآخرة، اللهم إني أسألك العفو والعافية في ديني...، واللفظ المذكور من بلوغ المرام.]
المزيــد ...

عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ جب صبح اور شام کرتے، تو ان دعاؤں کو پڑھنا نہیں چھوڑتے تھے: ”اللَّهُمَّ إنِّي أسْأَلُكَ العافيَةَ في ديني، ودُنْيَايَ، وأَهْلي، ومَالي، اللَّهُمَّ اسْتُر عَوْراتي، وآمِنْ رَوْعاتي، واحفَظْني مِنْ بين يديَّ، ومِن خَلْفِي، وعن يميني، وعن شِمَالي، ومِنْ فَوْقِي، وأَعُوذُ بِعَظمَتِك أَنْ أُغْتَالَ مِنْ تَحتي“ اے اللہ! میں تجھ سے اپنے دین و دنیا، اہل و عیال اور مال میں عافیت طلب کرتا ہوں۔ اے اللہ! میری شرم گاہ کی ستر پوشی فرما، مجھے خوف و خطرات سے مامون و محفوظ رکھ، میری حفاظت فرما آگے سے، پیچھے سے، دائیں سے، بائیں سے اور اوپر سے۔ اور میں تیری عظمت کی پناہ چاہتا ہوں اس بات سے کہ میں اچانک اپنے نیچے سے پکڑ لیا جاؤں۔

شرح

آپ ﷺ صبح و شام اس دعا کے کہنے کا شوق بے پایاں رکھتے تھے اور اسے کبھی نہیں چھوڑتے تھے۔ کیوں کہ یہ دعا عظیم معانی پر مشتمل ہے۔ اس دعا میں اللہ تعالیٰ سے عافیت مانگی گئی ہے۔ ”العافيَةَ في ديني“ عافیت سے مُراد دینی معاملات میں نافرمانیوں، شرعی خلاف ورزیوں اور بدعات سے سلامتی اور حفاظت ہے۔ ”ودُنْيَايَ، وأَهْلي، ومَالي“ دنیاوی عافیت سے مراد مصائب اور شرور سے حفاظت ہے۔ اہلِ خانہ کی عافیت سے مراد بُرى معاشرت، امراض وبىمارىوں اور دنیا طلبی میں انہماک سے حفاظت۔ اور مالی عافیت سے مراد اپنے مال کا آفتوں، شبہات اور حرام امور سے حفاظت ہے۔ ”اللَّهُمَّ اسْتُر عَوْراتي، وآمِنْ رَوْعاتي“ یعنی میرے گناہوں اور عیوب میں سے ہر وہ چیز، جس کے ظاہر ہونے پر مجھے شرم آئے، اس پر پردہ ڈال دے۔ اور مجھے اس خوف سے امن و سلامتی میں رکھ، جو مجھے خوف زدہ کرے۔ ”واحفَظْني مِنْ بين يديَّ، ومِن خَلْفِي، وعن يميني، وعن شِمَالي، ومِنْ فَوْقِي“ یعنی چھ اطراف سے آنے والی بلاؤوں اور مصیبتوں سے میری حفاظت فرما اور ہر جگہ کے شر کے سے مجھے بچا۔ ”وَأَعُوذُ بِعَظمَتِك أَنْ أُغْتَالَ مِنْ تَحتي“ یعنی میں تیری عظمت کے طفیل اس بات سے پناہ مانگتا ہوں کہ نیچے سے خفیہ طور پر مجھے اچک لیا جائے۔

ترجمہ: انگریزی زبان ہسپانوی زبان ترکی زبان انڈونیشیائی زبان بوسنیائی زبان بنگالی زبان چینی زبان فارسی زبان تجالوج
ترجمہ دیکھیں