عن أبي هريرة -رضي الله عنه- مرفوعاً: بَيْنَمَا رجلٌ يصلي مُسْبِلٌ إِزَارَهُ، قال له رسولُ اللهِ -صلى الله عليه وسلم-: «اذْهَبْ فَتَوَضَّأْ» فذهب فَتَوَضَّأَ، ثم جاء، فقال: «اذْهَبْ فَتَوَضَّأْ» فقال له رجلٌ: يا رسولَ اللهِ، ما لك أَمَرْتَهُ أن يتوضأ ثم سَكَتَّ عنه؟ قال: «إِنَّهُ كان يُصَلِّي وهو مُسْبِلٌ إِزَارَهُ، وإِنَّ اللهَ لا يقبلُ صلاةَ رجلٍ مُسْبِلٍ».
[ضعيف.] - [رواه أبو داود وأحمد.]
المزيــد ...

ابو ہُریرۃ - رضی اللہ عنہ- سے روایت ہے وہ کہتے ہیں کہ ایک شخص اپنا ازار ٹخنوں سے نیچے لٹکائے نماز پڑھ رہا تھا کہ اسی دوران رسول اللہ - رضی اللہ عنہ- نے اس سے فرمایا: ”جاؤ وضو کر کے آؤ“ وہ گیا اور وضو کر کے دوبارہ آیا، پھر آپ نے فرمایا: ”جاؤ اور وضو کر کے آؤ“ تو ایک شخص نے عرض کیا: اللہ کے رسول! آپ اس کو وضو کا حکم دیتے ہیں پھر چپ ہو رہتے ہیں آخر کیا بات ہے؟ آپ نے فرمایا: وہ ”ازار ٹخنوں سے نیچے لٹکا کر نماز پڑھ رہا تھا، اور اللہ ایسے شخص کی نماز قبول نہیں فرماتا جو اپنا ازار ٹخنے کے نیچے لٹکائے ہو“۔

شرح

ابو ہُریرہ - رضی اللہ عنہ- سے روایت ہے کہ آپ ﷺ نے ایک شخص کو اس طرح نماز پڑھتے دیکھا کہ اس کا ازار ٹخنوں سے نیچے لٹک رہا تھا، آپ ﷺ نے اس سے کہا جا کر وضو کرو، وہ گیا اور وضو کیا، پھر واپس لوٹا تو آپ ﷺ نے پھر فرمایا جاؤ وضو کر آؤ۔ ایک شخص نے آپ ﷺ سے پوچھا اے اللہ کے رسول! آپ اسے وضو کرنے کا حکم کیوں دے رہے ہیں؟ آپ ﷺ نے فرمایا نماز پڑھتے ہوئے اس کا ازار ٹخنوں سے نیچے لٹک رہا تھا، اللہ اس شخص کی نماز قبول نہیں کرتا جس کا ازار ٹخنوں سے نیچے لٹک رہا ہو۔ یہ صریح نص ہے اس بارے میں کہ اللہ تعالیٰ اس شخص کی نماز قبول نہیں کرتا جس کا ازار ٹخنوں سے نیچے لٹک رہا ہو یعنی اس کی نماز فاسد ہے اور اس کا لوٹانا لازم ہے۔ لیکن یہ درست نہیں، اس لئے کہ حدیث ضعیف ہے، آپ ﷺ سے صحیح سند کے ساتھ مروی نہیں۔ علماء کے اقوال میں سے صحیح یہ ہے کہ ازار لٹکے ہوئے شخص کی نماز درست ہے، تاہم وہ گناہ گار ہوگا۔

ترجمہ: انگریزی زبان فرانسیسی زبان ہسپانوی زبان ترکی زبان انڈونیشیائی زبان بوسنیائی زبان روسی زبان بنگالی زبان چینی زبان
ترجمہ دیکھیں