عن عائشة -رضي الله عنها- أنه مَرَّ بها سائل، فَأَعطَته كِسْرَة، ومَرَّ بها رجل عليه ثِيَابٌ وهَيئَة، فَأَقْعَدَته، فَأَكَل، فَقِيل لَهَا في ذلك؟ فقالت: قال رسول الله -صلى الله عليه وسلم-: «أَنزِلُوا النَّاسَ مَنَازِلَهم». وفي رواية «أَمَرَنا رسول الله -صلى الله عليه وسلم- أَنْ نُنْزِل النَّاس مَنَازِلَهُم».
[ضعيف.] - [الرواية الأولى: رواها أبو داود. الرواية الثانية: ذكرها مسلم في لأول صحيحه تعليقا والحاكم في معرفة علوم الحديث.]
المزيــد ...

عائشہ رضی اللہ عنہا کہتی ہیں کہ ان کے پاس سےایک مانگنے والا گزرا، تو انھوں نے اسے روٹی کا ایک ٹکڑا دے دیا۔ پھر ان کے پاس سے خوش پوشاک اور عمدہ شکل و ہیئت والا ایک شخص گزرا، تو انھوں نے اسے بٹھایا، (اور کھانا پیش کیا)اور اس نے کھایا، ان سے جب اس بارے میں پوچھا گیا، تو انھوں نے جواب دیا کہ رسول اللہ ﷺ کا فرمان ہے: "لوگوں کے ساتھ ان کے مراتب کے لحاظ سے معاملہ کرو"۔ "رسول اللہ ﷺ نے ہمیں حکم دیا کہ ہم لوگوں کےمراتب کا لحاظ رکھیں"۔

شرح

یہ حدیث اماں عائشہ رضی اللہ عنہا کو پیش آنے والے ایک واقعہ کو بیان کرتی ہے۔ ان کے پاس دو آدمی گزرے۔ انھوں نے پہلے کو تو روٹی وغیرہ کا ایک ٹکڑا دے دیا، جب کہ دوسرا جو ذرا اچھی حالت میں تھا، اس کا انھوں نے اکرام اور عزت افزائی کی۔ عائشہ رضی اللہ عنہا سے پوچھا گیا کہ آپ نے ان دونوں کے مابین فرق کیوں کیا، بایں طور کہ ایک کو تو بس روٹی کا ایک ٹکڑا دے دیا اور دوسرے کو بٹھا کر کھانا کھلایا؟ انھوں نے جواب دیا کہ رسول اللہ ﷺ نے ہمیں حکم دیا کہ ہم ہر ایک سے اس انداز میں معاملہ کریں، جو دین اور علم و شرف میں اس کے منصب سے مناسبت رکھتا ہو۔ اگرچہ یہ حدیث ضعیف ہے، لیکن اس میں جس بات کا ذکر ہے، اس کا لحاظ کرنے میں کوئی شے مانع نہیں؛ کیوںکہ اس کا تعلق آداب سے ہے۔

ترجمہ: انگریزی زبان فرانسیسی زبان ہسپانوی زبان ترکی زبان انڈونیشیائی زبان بوسنیائی زبان روسی زبان بنگالی زبان چینی زبان
ترجمہ دیکھیں